انتخابات 2018 کے بعد نئی آنیوالی حکومت کتنا عرصہ چلے گی ؟ ماہر علم نجوم کا ایسا دعویٰ کہ سیاسی حلقوں میں تشویش کی لہر دوڑ گئی

لاہور(ویب ڈیسک) پاکستان میں گزشتہ دو حکومتوں کے علاوہ جمہوری مدت کوئی پوری نہ کرسکی تاہم گزشتہ دونوں حکومتیں تو اپنی مدت پوری کرگئیں تاہم وزرائے اعظم نئے لانا پڑگئے تھے ، اب عام انتخابات میں ایک ہفتے کا وقت رہ گیا ہے لیکن ایک مرتبہ پھر ماہرعلم نجوم نے دعویٰ کردیاہے کہ،

آئندہ بننے والی حکومت بھی اپنی مدت پوری نہیں کرپائے گی ۔موقر قومی اخبار سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے ماہرعلم نجوم شیخ طارق اقبال نے بتایاکہ آئندہ آنیوالی حکومت ڈیڑھ سے دو سال تک چلے گی ، اس کے بعد دوبارہ الیکشن کی طرف جارہے ہیں، ڈیڑھ سال کے بعد مسلم لیگ ن کے بھگوڑے بھی واپس آجائیں گے اور حیران کن بات یہ کہ مسلم لیگ ن ان کو دوبارہ قبول بھی کرلے گی، اب تک علم نجوم یہی بات بتارہاہے ۔ایک سوال کے جواب میں ان کاکہناتھاکہ کسی صورت یہ حکومت اپنی مدت پوری نہیں کر پائے گی، یہ آپ کو کچھ ہی دنوں میں اندازہ ہو جائے گاکہ کیا معاملات ہوگئے ہیں۔ الیکشن تک آپ نے دیکھنا ہے اس کے بعد مسلم لیگ ن بڑھنا شروع ہوجائے گی اور پی ٹی آئی گرنا شروع ہوجائے گی تاہم دھرنے نہیں ہوں گے ۔ انہوں نے بتایاکہ ن لیگ کی جتنی ساکھ خراب ہوئی ،وہ آہستہ آہستہ بہتر ہوگی اور پھر یہ اوپر کی جانب جانا شروع ہوجائے گی ۔ جبکہ دوسری جانب قومی اسمبلی کے حلقہ این اے 131لاہور میں پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان اور مسلم لیگ ن کے رہنما سعد رفیق کی انتخابی مہم زوروں پر ہے، پورے والٹن روڈ کو بھی بینرزاور جھنڈوں سے بھردیاگیا، دونوں امیدواروں میں کانٹے دار مقابلہ متوقع ہے لیکن ، بالآخر جیت کس کی ہوگی ، ماہرعلم نجوم نے بڑی پیشن گوئی کردی۔موقر قرمی اخبار سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے ماہرعلم نجوم شیخ طارق اقبال نے بتایاکہ،

این اے 131واحد حلقہ ہوگا جو قریب قریب چلے گا لیکن بالآخر امکانات یہی ہیں کہ عمران خان اس حلقے سے الیکشن ہار جائیں گے اور سعد رفیق کی فتح ہوگی ۔ان کاکہناتھاکہ اب پی ٹی آئی کا خیال ہے کہ ان کے امیدوار جیت جائیں گے ، ن لیگ کہہ رہی ہے کہ ہم جیت رہے ہیں، لیکن 25جولائی کو جو نتیجہ آئے گا وہ حیران کن ہوگا اورآپ سب دیکھیں گے کہ یہ کیا ہوگیا ہے؟ جہاں تک مجھے محسوس ہوتا ہے ن لیگ بالآخر ان سے قدر ایک دو درجے ترجیح لے کر اوپر آجائے گی۔ جبکہ دوسری جانب مسلم لیگ ن کے باغی رہنماءچوہدری نثار علی خان نے جیپ کا انتخابی نشان حاصل کیاتو اس کے پیچھے امیدواروں کی قطاریں لگ گئیں، 60کے قریب افراد نے جیپ کا نشان حاصل کرلیا لیکن، اب ماہرعلم نجوم نے پیشن گوئی کی ہے کہ انتخابی نشان جیپ الیکشن نتائج میں زیادہ کامیابی نہیں حاصل کرپائے گا اور نہ ہی جیپ کے انتخابی نشان پر لڑنے والے چوہدری نثار علی خان کا وزیراعظم بننے کا کوئی امکان ہے ۔جیپ کے نشان پر لڑنے والے امیدوار کے وزیراعظم بننے سے متعلق سوال پر شیخ طارق اقبال نے بتایاکہ جیپ کے کوئی امکانات نہیں ہیں، خود سابق وزیرداخلہ چوہدری نثار علی خان بھی ایک ہی حلقے سے جیت پائیں گے اور دوسرے حلقے سے ان کے حریف امیدوار کو کامیابی ملے گی ، اسی طرح کئی دیگر کمزور سیاستدانوں کے پاس بھی جیپ کا انتخابی نشان ہے ۔انہوں نے مزید بتایاکہ اب کی بار کسی جماعت کی واضح اکثریت کا امکان نہیں ، مخلوط حکومت بنے گی جو بمشکل ڈیڑھ سے دو سال چل پائے گی ، اس کے بعد دوبارہ انتخابات ہوں گے ۔(س)

دوستوں سے شئیر کریں