اگر نواز شریف نے گزشتہ آرمی چیف کے دور سے متعلق ثبوت فراہم کیے۔۔۔ تو کیا فوج کارروائی کرے گی:حامد میر کے سوال پر پاک فوج کا دھماکے دار بیان سامنے آگیا

اسلام آباد (نیوزڈیسک )ڈی جی آئی ایس پی آر میجر جنرل آصف غفور باجوہ نے کہا ہے کہ امریکی صدر کے بیان پر قومی رد عمل خوش آئند ہے ،حالات کا تقاضا کرتے ہوئے ہمیں ایک ہونے کی ضرورت ہے ۔نجی نیوز چینل جیو نیوز کے پروگرام ”کیپٹل ٹاک“ میں میزبان حامد میر نے سوال کرتے ہوئے کہا نواز شریف نے آج لکھی ہوئی اسٹیٹمنٹ سوچ سمجھ کر پڑھی ہے ،اس اسٹیٹمنٹ کے پہلے حصے میں ڈونلڈٹرمپ کے ٹوئٹ پر مو ثر جواب دیا جبکہ دوسرے حصے میں کچھ ایسی باتیں کیں جو عدلیہ کے بارے میں نہیں بلکہ اسٹیبلشمنٹ کے بارے میں ہیں ،نواز شریف نے کہا کہ ثبوت کے ساتھ پردہ چاک کر سکتا ہوں ،جنرل صاحب اس بات پر جواب دینا پسند کریں گے ؟۔اس سوال پر ڈی جی آئی ایس پی آر نے کہا کہ نواز شریف نے امریکہ کے حوالے سے جو بیان دیا وہ بہت خو ش آئند ہے ،یہ وقت کی ضرورت ہے کہ تمام سیاسی جماعتیں اور پاکستان یک زبان ہو کر کسی بھی خطرے کے خلاف متحدکھڑا ہے ۔انہوں نے کہا کہ سوال کا دوسرا حصہ سیاسی ہے اور اس حوالے سے پہلے بھی کہا تھا کہ اگر ان کے پاس کوئی ثبوت ہیں تو وہ لے کر آئیں ،لیکن حالات کا تقاضا ہے کہ ہمیں اس وقت ایک ہونے کی ضرورت ہے ۔حامد میر نے ایک فالو اپ سوال کرتے ہوئے پوچھا کہ اگر نواز شریف کی جانب سے کوئی ثبوت سامنے لائے جائیں جن کا تعلق موجودہ آرمی چیف سے نہیں بلکہ سابق آرمی چیف کے دور سے ہو گا ،اگر وہ ثبوت سامنے آگئے تو کیا افواج پاکستان کی قیادت ان ثبوتوں کی بنیاد پر کارروائی کرے گی ؟اس پر میجر جنرل آصف غفور باجوہ نے کہا کہ”i think,we will cross the bridge when it comes“(مناسب وقت آنے پر فیصلہ کریں گے
دوستوں سے شئیر کریں

Comments

comments

مزید پڑھیں  نوازشریف کوپڑنے والاجوتانوجوان نے کتنے میں خریدنے کااعلان کردیا،جان کرآپ کے ہوش اڑ جائیں گے