’جب لڑکیاں اس حالت میں ہوں تو سمجھیں وہ برہنہ ہی ہیں اور ایسے میں مردوں کو چاہیے۔۔۔‘ ترک ٹیچر نے ایسی بات کہہ دی کہ انٹرنیٹ پر ہنگامہ برپاہوگیا، مردوں کو بھی غصہ آگیا

انقرہ(مانیٹرنگ ڈیسک) ترکی کے ایک ٹیچر نے کھیل کے وقت یا جم میں پہنے جانے والے چست کپڑوں میں ملبوس خواتین کے متعلق ایسی بات کہہ دی ہے کہ انٹرنیٹ پر ہنگامہ برپا ہو گیا اور حکام نے اسے نوکری سے ہی فارغ کر دیا۔ میل آن لائن کی رپورٹ کے مطابق ایرکان ہرمانسی نامی اس ٹیچر نے اپنے ٹوئٹر اکاﺅنٹ پر کہا کہ ”خواتین جب کھیل یا ورزش کے وقت انتہائی چست لباس پہنتی ہیں تب حقیقت میں وہ برہنہ ہی ہوتی ہیں۔ ایسے میں مردوں کو ان کی طرف کشش محسوس کرنی چاہیے۔ نوجوان لڑکیوں کو اس لباس میں دیکھ کر جس مرد کو کشش محسوس نہیں ہوتی اسے اپنی مردانگی کی فکر کرنی چاہیے۔“

مزید پڑھیں  سارہ علی خان بالی وڈ میں انٹری سے قبل کیسی دکھتی تھیں،تصاویر دیکھ کر آپ بھی حیران رہ جائیں گے

مزید پڑھیں  جو بھی ہو جائےاس ملک کی مدد جاری رکھیں گے ، سعودی شہزادے کے بیان نے دل خوش کر دیا

ایرکان نے مزید لکھا کہ ”آج کل سکولوں میں بدکاری عام ہے۔ اگر کوئی سمجھتا ہے کہ بدکاری ہاتھوں، زبان یا آنکھوں سے نہیں ہوتی تو وہ شخص اسلام کو جانتا ہی نہیں۔ لڑکیوں کو اس چست لباس میں دیکھ کر جس شخص کے کان میں شیطان سرگوشیاں نہیں کرتا اسے بھی فکر کرنی چاہیے۔“ ایرکان کے یہ بیانات آنے پر سوشل میڈیا پر ہنگامہ برپا ہو گیا اور ترک انتظامیہ نے فوری طور پر اسے نوکری سے معطل کرکے اس کے خلاف تحقیقات کا آغاز کر دیا ہے۔واضح رہے کہ ایرکان ترکی کے وسطی صوبے اناطولیہ میں ایک ووکیشنل مذہبی سکول میں پڑھاتے تھے۔

مزید پڑھیں  امریکا میں  خوبصورت ترین اور بے شمار رنگوں والی قوس قزح کا نظارہ ۔۔۔تصاویر آپ کو  مسحور کر ڈالیں  گی

دوستوں سے شئیر کریں

Comments

comments