جسٹس اعجازالاحسن کے گھر پر حملہ کس نےکروایا؟ نامور سیاستدان کے انکشاف نے پورے ملک میں نیا ہنگامہ کھڑا کر دیا

جسٹس اعجازالاحسن کے گھر پر حملہ کس نےکروایا؟ نامور سیاستدان کے انکشاف نے پورے ملک میں نیا ہنگامہ کھڑا کر دیا

لاڑکانہ(ویب ڈیسک) پیپلزپارٹی کے رہنما نثار کھوڑو نے کہا ہے کہ لاہور میں جج کے گھر پر فائرنگ کے واقعے پر شہباز شریف جواب دیں، شہباز شریف جج پر حملہ کراکر نواز شریف کو عمر قید دلانا چاہتے ہیں۔


ان خیالات کا اظہار انہوں نے لاڑکانہ میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کیا، نثار کھوڑو نے کہا کہ جج کے گھر پر پولیس گارڈز کے ہوتے حملہ ہو تو ذمہ دار شہباز شریف ہیں، شہباز شریف بھائی کو نااہل کرانے کے بعد اب شاید عمر قید دلانا چاہتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ چوہدری نثار کی وزیر اعلیٰ پنجاب سے دوستی ہے، شہباز شریف کی الگ جماعت ہوگئی تو چوہدری نثار ساتھ کھڑے ہوں گے۔پیپلزپارٹی رہنما نے کہا کہ سندھ میں نئے صوبے بنانے کی بات سازش ہے، پاکستان میں 22 صوبے بنانے کا مطالبہ سازشی منصوبے کا حصہ ہے۔نثار کھوڑو نے کہا کہ کرپشن کا بادشاہ نواز شریف ثابت ہوا ہے کوئی اور نہیں ہوا، پیپلزپارٹی کے وزیر اعظم یوسف رضا گیلانی کو کرپشن نہیں توہین عدالت پر ہٹا گیا تھا۔واضح رہے سپریم کورٹ کے جج جسٹس اعجاز الاحسن کے گھر پر گذشتہ رات اور آج صبح فائرنگ کے واقعات پیش آئے تھے، رات کو نامعلوم افراد نے اُن کے گھر کے مرکزی دروازے پر فائرنگ کی تھی جبکہ صبح باورچی خانے کی کھڑکی پر گولی فائر کی گئی تھی۔جبکہ دوسری جانب قومی اسمبلی کے اسپیکر ایاز صادق نے کہا ہے کہ اعلیٰ عدلیہ کے جج کے گھر پر فائرنگ بہت افسوسناک واقعہ ہے، جن لوگوں نے اس حرکت کے ذریعے ڈرانے یا دھمکانے کی کوشش کی انہیں کیفر کردار تک پہنچانا چاہیے۔

مزید پڑھیں  پاکستان کا وہ علاقہ جہاں چیف جسٹس کا سخت ترین حکم ہوا میں اڑا دیا گیا

لاہور میں خطاب کرتے ہوئے ایاز صادق کا کہنا تھا کہ میرا حلقہ اب 6 حلقوں میں بٹ گیا مگر میرا دل ریلوے کے لوگوں کیساتھ ہے، پاکستان میں بہت سے تجربات ہوئے چاہتا ہوں کہ بروقت اور شفاف الیکشن ہوں۔اُن کا کہنا تھا کہ سیاست میں جس قسم کی انجینئرنگ ہورہی ہے وہ پاکستان کی بنیادوں کو کھوکھلا کرنے کی سازش ہے، پارٹیاں بدلنےوالے اپنوں کے نہیں ہوسکے وہ کسی اور کے کیا ہوں گے کیونکہ وفاداریاں بدلنے والے جس جماعت سے بھی ہوں ایسے لوگوں کے نام تاریخ میں یاد نہیں رکھےجاتے۔ایازصادق کا مزید کہنا تھا کہ نظام کی اپ گریڈیشن سے ریلوے کی کارکردگی بہتر ہوئی اور اب محکمے کی آمدنی 40 سے 45 کروڑ تک پہنچ چکی، مجھ سے زیادہ ریلوے پر کوئی تنقید نہیں کرتا تھا کیونکہ خواہش ہے کہ ادارہ بہتر ہو۔اُن کا مزید کہنا تھا کہ سرکاری کنٹرول میں رہتے ہوئے بھی اداروں کو بہتر بنایا جاسکتا ہے، ریلوے کا محکمہ اپنے ریٹائرڈملازمین کو خود پنشن دیتا ہے، حکومت کو چاہئے دیگر اداروں کی طرح ریلوے ملازمین کو بھی سرکاری ادارے سے پینشن ادا کرے۔ایاز صادق کا مزید کہنا تھا کہ محکمہ اسی طرح کام کرتا رہا تو 15سے20 سال میں ہمارا شمار اُن ممالک میں ہوگا جن کا شمار دنیا کے پاس ریلوے کا بہترین نظام موجود ہے۔ (س)

مزید پڑھیں  نواز شریف کو وطن واپس پہنچنے سے پہلے ہی خوشخبری مل گئی۔۔مسلم لیگ ن میں کس نے شمولیت کا فیصلہ کر لیا


دوستوں سے شئیر کریں

Comments

comments