رانا ثناء اللہ سے استعفی لیا جائے

مسلم لیگ (ن) کے خلاف بنتے نئے سیاسی اتحاد اور قیادت نے بروقت فیصلہ نہ کرنے کی پالیسی برقرار رکھی ہوئی ہے جس کے باعث پارٹی کے اندر بے چینی میں اضافہ ہو رہا ہے .تفصیلات کے مطابق سینئر قیادت نے رانا ثناء اللہ کے استعفی کا مشورہ دیا ہے .

باقر نجفی کی رپورٹ منظر عام پر آنے کے بعد مسلم لیگ (ن) کے اندر نئے سیاسی اتحاد تشکیل پا رہے ہیں جس کی وجہ سے پارٹی کے اندر کافی پریشانی پائی جاتی ہے اور پارٹی اراکین سے مشورہ بھی دیا جانے لگا ہے چونکہ مسلم لیگ (ن) ہر روز ایک نئے بحران کا شکار ہو رہی ہے .

مزید پڑھیں  نواز شریف پر جوتا پھینکنے والے ملزمان کہاں گئے ؟

لہذا اگر بروقت فیصلہ نہ کیا گیا تو پارٹی سیاست بھی خطرے میں پڑ سکتی ہے .ذرائع کے مطابق پارٹی اراکین کی غالب اکثریت اسی بات پر متفق ہے کہ پارٹی جلد از جلد کوئی مناسب فیصلہ کرے تاکہ حالات کو مزید خراب ہونے سے بچایا جا سکے جبکہ 5اراکین اسمبلی اور پارٹی کے ضلعی عہدیدار پہلے ہی ان معاملات پر استعفی دے چکے ہیں اور مزید اراکین اسمبلی کا بھی ااستعفی دینے کا امکان ہے.

مزید پڑھیں  PPP disclose Name for CareTaker Prime Minister

پارٹی قیادت نے سینئراراکین سے کہا ہے کہ وہ خود رانا ثناء اللہ سے استعفی کی بات کریں اگر وہ خود راضی ہو جاتے ہیں تو ٹھیک ورنہ پارٹی قیادت ان کو استعفی دینے کے لئے نہیں کہے گی .پانامہ لیکس ا ور ختم نبوت ﷺمعاملہ کی وجہ سے پہلے ہی پارٹی کو کافی نقصان پہنچ چکا ہے .پارٹی کے بیشر ارکان اسمبلی نے خود کو پارٹی امور سے کافی حد تک الگ کر لیا ہے ،جس کا اندازہ عبوری حکومت کا اعلان ہونے کے بعد ہو گا .

مزید پڑھیں  دیکھو دیکھو کون چھایا۔۔۔۔۔ بَلا چھایا بَلا چھایا: سیاسی میدان میں ہلچل، نامور (ن) لیگی رہنماء تحریک انصاف میں شامل ہوگیا

..

دوستوں سے شئیر کریں

Comments

comments