روالپنڈی :22لوگوں کو یرغمال بنانے والا ملزم گرفتار۔۔۔تعلق کہاںسے اور پیچھے کس کا ہاتھ جان کہ آپ حیران رہ جائیںگے

راولپنڈی (نیوزڈیسک) اسلحے کی نوک پر 22 سے 23 افراد کو یرغمال بنانے والے شخص کو زخمی حالت میں گرفتار کرلیا گیا ہے، ملزم کی فائرنگ سے ایلیٹ فورس کا ایک جوان اور ملزم کا سسر زخمی ہوئے ہیں جبکہ اہل خانہ کو بحفاظت بازیاب کرالیا گیا ہے۔ سی پی او راولپنڈی کا کہنا ہے کہ واقعے میں کوئی جانی نقصان نہیں ہوا۔تفصیلات کے مطابق ایک شخص جسے ابتدائی طور پر پولیس کی جانب سے ذہنی معذور قرار دیا گیا نے مورگاہ آفیسر کالونی میں ہفتہ اور اتوار کی درمیانی شب خود کشی کی کوشش کی ، اہل خانہ اسے روکنے لگے تو اس نے ان پر ہی اسلحہ تان لیا اور انہیں یرغمال بنالیا۔ پڑوسیوں نے واقعے کی اطلاع پولیس کو دی جو فوری طور پر موقع پر پہنچ گئی اور کارروائی کا آغاز کردیا۔ پولیس کی جانب سے ذہنی معذور شخص کو قابو کرنے کی کوشش کی گئی تو اس نے پولیس پارٹی کو دیکھتے ہی فائرنگ کردی جس کے نتیجے میں 50 سالہ اکبر نامی شہری شدید زخمی ہوگیا جسے طبی امداد کیلئے ہسپتال منتقل کردیا گیا۔ پولیس حکام کا کہنا ہے کہ زخمی ہونے والا شخص ملزم کاحقیقی چچا اور سسر ہے جو سیالکوٹ سے اسے منانے کیلئے آیا تھا۔ علاوہ ازیں ایلیٹ فورس کے ایک اہلکار خرم کو دو گولیاں لگی ہیں جسے تشویشناک حالت میں ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر ہسپتال منتقل کیا گیا ہے۔ پولیس اہلکاروں نے پہلے گھر سے بھاگ کر آنے والے ایک بچے کو بحفاظت نکالا جس کے بعد باضابطہ آپریشن کیا گیا ، پولیس کی جانب سے گھر میں آنسو گیس کے 2 شیل فائر کیے گئے جس کے بعد ملزم کو زخمی حالت میں حراست میں لے لیا گیا ۔ سی پی او راولپنڈی اسرار عباسی نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ گزشتہ رات انہیں اطلاع ملی کہ گھر میں 32 سالہ شخص نے 22 افراد کو یرغمال بنایا ہواہے جس کے بعد پولیس فورس موقع پر پہنچی اور ملزم کے رشتہ داروں سے رابطہ کیا، جنہوں نے بتایا کہ بعض اوقات ملزم اس طرح کرلیتا ہے اس لیے آپ ابھی آپریشن نہ کریں ہمیں معاملہ خود دیکھنے دیں۔سی پی او نے مزید کہا کہ ملزم کے چچا اکبر جو کہ اس کے سسر بھی ہیں سیالکوٹ سے آئے ، جب وہ گھر کے باہر پہنچے تو ملزم نے انہیں اپنے پاس بلایا ، جوں ہی وہ آگے بڑھے تو ملزم نے ان پر فائر کردیا جس سے وہ شدید زخمی ہوگئے۔ اس کے علاوہ ایلیٹ کے جوان کو بھی دو فائر لگے ہیں جس کی حالت خطرے سے باہر ہے۔ایک سوال کے جواب میں سی پی او نے کہا کہ اس طرح کی فائرنگ عام آدمی نہیں کرتا کیونکہ جس طرح وہ اسلحہ چلا رہا تھا اور جس طریقے سے اس نے اتنی پولیس فورس ہونے کے باوجود اطمینان کا مظاہرہ کیا ہے اس سے یہ بندہ ٹرینڈ لگتا ہے۔واضح رہے کہ 2013 میں سکندر نامی شخص نے اسلام آباد کے ریڈ زون میں اسلحے کی نوک پر پورے 5 گھنٹے تک شہر کو یرغمال بنائے رکھا تھا ، ٹی وی چینلز پر واقعے کی لائیو کوریج ہوتی رہی لیکن اس موقع پر بھی پولیس فورس مکمل طور پر ناکام دکھائی دی تھی
دوستوں سے شئیر کریں

Comments

comments

مزید پڑھیں  Nawaz Sharif Another Hard Statement | Urdu tv online