نواز شریف اور شہباز شریف کے مابین اختلافات کی اصل وجہ سامنے آگئی:جانئے

اسلام آباد (نیوزڈیسک)نجی ٹی وی چینل کے پروگرام میں بات کرتے ہوئے معروف صحافی حامد میر نے کہا کہ شہباز شریف جانتے ہیں کہ ان کے گرد گھیرا اس کے لیے تنگ کیا جا رہا ہے کیونکہ وہ ابھی تک اپنے بڑے بھائی نواز شریف کے ساتھ کھڑے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ شہباز شریف اگر نواز شریف سے اختلاف کرتے بھی ہیں تو وہ ان کی پالیسی سے اختلاف بند کمرے میں ہی کرتے ہیں ۔شہباز شریف سے میری تفصیلی بات ہوئی تو ان کا کہنا تھا کہ میں ہر حال میں اپنے بھائی کے ساتھ رہوں گا اور اپنے بھائی کا ساتھ نہیں چھوڑوں گا۔ لیکن ملسم لیگ ن کے اندر کچھ لوگ ہیں جو چاہتے ہیں کہ ان دونوں بھائیوں کے درمیان اختلافات بڑھیں۔ اور ملک میں کچھ ایسی طاقتیں بھی موجود ہیں جو حیران ہیں کہ شہباز شریف نے ابھی تک اپنے بھائی کے خلاف کھُل کر بغاوت کیوں نہیں کی ؟ مسلم لیگ ن کے کئی ایم اینایز اور این پی ایز نے آپس میں فیصلہ کر لیا ہے کہ اگر آئندہ الیکشن میں لڑنا اور جیتنا ہے تو مسلم لیگ ن کی قیادت شہباز شریف کے حوالے ہو جائے، اور پارٹی انہیں واضح طور پر آئندہ الیکشن میں وزارت عظمیٰ کا اُمیدوار قرار دے دے۔اگر یہ صورتحال ہو جائے گی تو مسلم لیگ ن کے زیادہ لوگ پارٹی نہیں چھوڑیں گے۔ اور اگر ایسا نہ ہوا تو پارٹی کے بہت سے لوگ پارٹی چھوڑنے کو تیار ہیں۔ غیر یقینی صورتحال کی صورت اگر برقرار رہی تو مسلم لیگ ن میں ٹوٹ پھوٹ کا عمل شروع ہو جائے گا۔ ایسی صورت میں شہباز شریف کے لیے خاموش رہنا مشکل ہو جائے گا ۔ لیکن جہاں تک مجھے نظر آ رہا ہے شہباز شریف آخر کار اپنے بھائی کے ساتھ ہی کھڑے ہوں گے۔مجھے ایسے لوگوں کا بجی پتہ ہےجو اس وقت نواز شریف کے ساتھ ہیں اور ان کے حای ہیں لیکن اندر سے وہ نواز شریف کی پالیسی سے اتفاق نہیں کرتے۔ ان لوگوں نے بغاوت کر دی تو شہباز شریف کے لیے بہت مشکل ہے، پاکستان میں پاور کی سیاست ہو رہی ہے۔ یہ سیاست کوئی انقلابی یا نظریاتی سیاست نہیں ہے۔ یہاں پر طاقت کی سیاست ہے ،ن لیگ میں وہ لوگ ہیں جو پہلے ق لیگ میں تھے اور مشرف کے ساتھ تھے ، زرداری کے ساتھ وہ لوگ موجود ہیں جو ضیا الحق کے ساتھ تھے ، عمران خان کے ارد گرد وہ لوگ ہیں جو ان کو پہلے گالیاں دیتے تھے اب ان کے ترجمان ہیں
دوستوں سے شئیر کریں

Comments

comments

مزید پڑھیں  یااللہ خیر،ملک پردہشتگردی سے بھی بڑاخطرہ منڈلانے لگا