نواز شریف کمرہ عدالت میں الائچی کے دانے چباتے رہے۔۔۔عدالت نے کیا فیصلہ سنایا :جانئے اس رپورٹ میں

اسلام آباد (نیوز ڈیسک) احتساب عدالت میں ریفرنسز کی سماعت میں پیشی کیلئے سابق وزیراعظم نواز شریف، مریم نواز اور کیپٹن (ر) صفدر ایک ساتھ لیکن الگ الگ گاڑیوں میں جوڈیشل کمپلیکس پہنچے۔ شریف خاندان کے خلاف نیب ریفرنسز کی سماعت معمول کے مطابق 9 بجے شروع ہوئی۔ نواز ریف اور مریم نواز پہلی جبکہ کیپٹن صفدر آخری نشست پر بیٹھے، وزراءاور ارکان اسمبلی معمول کے مطابق دونوں رہنماؤں کے ہمراہ موجود رہے اور فرداً فرداً نواز شریف سے ملنے کی کوشش کرتے رہے۔قومی سلامتی سے متعلق پارلیمانی کمیٹیوں کا اجلاس،پارلیمنٹ کا مشترکہ نہ بلانے کا فیصلہ،آئندہ اجلاس میں عسکری قیادت کو بلانے کی تجویزروزنامہ ایکسپریس کے مطابق عدالتی کارروائی کے ساتھ ساتھ سلام دعا کا سلسلہ جاری رہا۔ وزیر مملکت برائے کیڈ ڈاکٹر طارق فضل چوہدری سلام کے لئے باری کے انتظار میں تھے لیکن موقع ہی نہیں مل پارہا تھا، نواز شریف اور مریم نواز کسی بات میں الجھے ہوئے تھے، ایسے میں مریم اورنگزیب اور آصف کرمانی سے بات چیت بھی جاری تھی۔طارق فضل نصف گھنٹہ کے انتظار کے بعد بالآخر خود ہی نواز شریف کے پاس آگئے۔ سیٹ کی جانب جھک کر سلام کیا اور گفتگو کا سلسلہ آگے بڑھانا چاہا لیکن نواز شریف نے سلام کا جواب دیتے ہی کرسی کی جانب اشارہ کرتے ہوئے کہا وہاں بیٹھ جائیں اس پر ان کا رنگ اڑ گیا۔طارق فضل نشست پر بیٹھنے کے بجائے کمراہ عدالت کے بالکل آخر میں طلال چوہدری اور دانیال عزیز کے ہمراہ کھڑے رہے اور خوش گپیاں کرتے رہے۔ اس دوران نواز شریف جیب سے الائچی کے دانے نکال کر چبانے لگے لیکن الائچی کا چھلکا اپنی واسکٹ کی جیب میں واپس ڈال لیا۔ عدالتی کارروائی کے دوران لیگی کارکنان آپس میں خوش گپیوں میں مصروف رہے۔
دوستوں سے شئیر کریں

Comments

comments

مزید پڑھیں  بریکنگ نیوز: (ن) لیگ کو ایک اور بڑا جھٹکا ۔۔۔ چیف جسٹس ثاقب نثار نے سابق وزیر خزانہ اسحاق ڈار کیخلاف فیصلہ سنا دیا