پاکستانی عورت کے لئے سات فیصلہ کن لمحات

اسلامائزیشن کے دس سالوں کے اندر ہی، دو دسمبر، 1988 کو ایک پاکستانی خاتون نے تاریخ رقم کی- قومی سبز رنگ میں ملبوس، بے نظیر بھٹو نے پاکستان کی وزیر اعظم کے طور پر حلف لیا اور اس طرح کے کسی بھی منصب کے لئے منتخب کی جانے والی پہلی مسلمان خاتون تھیں-

مزید پڑھیں  Qarz se nijat ka wazifa

اس موقع پر پارلیمنٹ کے باہر جمع ہونے والے جم غفیز سے خطاب کرتے ہوئے بینظیر بھٹو نے کہا،

“آج ہم یہاں آزادی منانے جمع ہوئے ہیں، جمہوریت منانے جمع ہوئے ہیں اور انگریزی زبان کے تین خوب صورت ترین الفاظ منانے جمع ہوئے ہیں یعنی “We the People”-

مزید پڑھیں  اس بد قسمت جوڑے کے ساتھ کل گوجرانوالہ میں کیا افسوسناک واقعہ پیش آ گیا؟ خبر آ گئی

اس خاص لمحے پر، بینظیر بھٹو وہ خاص خاتون بن گئیں جو ایک شخصیت کے روپ میں کڑوڑوں افراد کے پوٹینشل کی نمائندہ تھیں، ہمت و جرات کی علامت تھیں، اور انسپریشن کا منبع تھیں- گو کہ کسی کو اس وقت، مستقبل کے المیہ واقعات کا اندازہ تک نہ تھا لیکن صرف یہ حقیقت کہ ایک مسلم ملک کی قیادت ایک مسلم عورت کے ہاتھوں میں تھی، اپنے آپ میں آگے کی جانب بہت بڑی چھلانگ تھی جس سے آنے والے تاریک دور میں روشنی حاصل کی جائے گی-

دوستوں سے شئیر کریں

Comments

comments