پریشان نہ ہوں۔۔۔عمران خان کا بھی بندوبست کرلیںگے :نواز شریف کو ترک حکومت سے بڑی خوشخبری مل گئی

لاہور (نیو ز ڈیسک) شریف خاندان کی مدد کیلئے ترکی بھی میدان میں آگیا ہے۔ شہباز شریف کے ساتھ ہی ترک وزیراعظم بھی سعودی عرب پہنچ چکے ہیں۔ انہوں مدینہ منورہ میں میاں شہباز شریف سے ملاقات کی اور دونوں نے اکٹھے مسجد نبوی میں حاضری دی۔روزنامہ خبریں کے مطابق ترک وزیراعظم بن علی یلدرم کی کوششوں سے بعض اہم شخصیات سے نواز شریف کی ملاقاتوں کا شیڈول طے پاگیا ہے جبکہ جمعیت اہلحدیث کے سربراہ سنیٹر ساجد میر بھی سعودی عرب میں سرگرم ہیں اور حوالے سے وہاں کی اہم شخصیات سے ملاقاتیں کررہے ہیں۔ اس صورتحال کے بعد نواز شریف نے بھی آج سعودی عرب جانے کا پروگرام بنالیا۔ انہوں نے سعودی ائیرلائنز کا ٹکٹ حاصل کیا ہے۔ یہ پرواز 737 آج دوپہر سعودی عرب روانہ ہوگی۔ معلوم ہوا ہے کہ نواز شریف ملاقاتوں کے علاوہ عمرہ بھی ادا کریں گے۔واضح رہے کہ ن لیگ کے کچھ دوسرے رہنما بھی سعودی عرب پہنچ چکے ہیں۔ ان میں وزیر ریلوے خواجہ سعد رفیق، وزیر تجارت پرویز ملک اور وزیراعظم کے معاون آصف کرمانی بھی شامل ہیں۔اخبار کے مطابق نواز شریف کسی این آر او کے لئے سرتوڑ کوششیں کررہے ہیں اور اس مقصد کے لئے وہ سعودی حکام سے مدد کے خواہشمند ہیں۔ آن لائن کے مطابق انہوں نے یقین دہانی کرائی ہے کہ وہ سیاست سے دستبردار ہوجائیں گے تاہم مریم نواز کو سیاست میں رہنے کی اجازت دی جائے۔ نواز شریف نے جمعہ کو مصروف دن گزارا۔ انہوں نے پارٹی کے چیئرمین راجہ ظفر الحق، وزیر خارجہ خواجہ آصف اور کچھ دوسرے پارٹی رہنماؤں سے ٹیلی فون پر بھی گفتگو کی۔این این آئی کے مطابق محفل میلاد اور نماز جمعہ کے بعد کارکنوں سے گفتگو کرتے ہوئے نواز شریف نے کہا کہ آئین توڑنے والوں کو سزا ملنی چاہیے، پرویز مشرف کو بہت جلد کٹھہرے میں لائیں گے، پرویز مشرف بزدل بن کر بیرون ملک بیٹھا ہے۔ مشرف کے کیسز کے معاملے پر عدلیہ کو بھی جگانا ہوگا، ملک اور قوم کے لئے ہر قربانی دینے کو تیار ہیں مگر اصولوں پر سمجھوتہ نہیں کریں گے، ہم نے ملک کو لوڈشیڈنگ کے اندھیروں، دہشتگردی اور غربت سمیت دیگر مسائل سے نجات دلائی ہے اور ملک کو معاشی طور پر بھی مضبوط کردیا ہے، عوام (ن) لیگ کے ساتھ ہیں آئندہ انتخابات میں بھی ہم ہی کامیاب ہوں گے۔میاں نواز شریف نے کہا کہ کارکن ن لیگ کا سرمایہ ہیں ہم ہر فورم پر کارکنوں کو ساتھ لے کر چلتے ہیں آئین و قانون کی حقیقی معنوں میں حکمرانی کی بات اپنے ذاتی نہیں بلکہ قومی مفادات کے لئے کررہے ہیں کیونکہ جب اس ملک میں آئین و قانون کی حکمرانی ہوگی تو جمہوریت اور پارلیمنٹ سمیت تمام ادارے مضبوط ہوں گے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان میں جمہوریت کی مضبوطی اور آئین قانون اور انصاف کی حکمرانی کے لئے ضروری ہے کہ ملک میں آئین توڑنے والوں کو سزا دی جائے۔
دوستوں سے شئیر کریں

Comments

comments

مزید پڑھیں  Urdu tv online Headlines | 11:00 A.M | 08 June 2018