/urdutvonline.com

کھل کر بتائوںگا۔۔۔ساری کہانی کی اصلیت کیا ہے۔۔۔نواز شریف نے پریس کانفرنس کرتے ہوئے اہم اعلان کردیا

اسلام آباد (نیوزڈیسک) سابق وزیراعظم نواز شریف نے کہا ہے کہ یہ انتخابات کا سال ہے اور اس کیساتھ ہی ماضی کے فرسودہ اصول پر کام شروع کر دیا گیا ہے کہ انجینئرنگ کے ذریعے لاڈلے کا راستہ ہموار کر دو۔ اگر پردے کے پیچھے کارروائیاں نہ رکیں تو یہیں اسلام آباد میں سارے ثبوت اور شواہد سامنے رکھ دوں گا اور گزشتہ چار سالوں کی کہانی بھی سناؤں گا اور یہ بھی بتاؤں گا کہ یہاں کیا کچھ ہوتا رہا ہے۔ پنجاب ہاؤس اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے سابق وزیراعظم نے کہا کہ ”یہ سال انتخابات کا ہے اور آپ جانتے ہیں انتخابات کے حوالے سے تاریخ زیادہ اچھی نہیں رہی۔ ہمارے پہلے انتخابات پاکستان بننے کے 23 سال بعد ہوئے اور ان کے نتائج کو تسلیم نہ کیا گیا اس کے بعد بھی جتنے انتخابات ہوئے عوامی رائے کو خلوص دل سے تسلیم نہیں کیا گیا۔ یہ ہی وجہ ہے کہ لیاقت علی خان شہید سے لے کر آج تک ایک بھی وزیراعظم اپنی معیاد پورری نہیں کر سکا۔ قائداعظم نے کہا تھا کہ عوامی رائے کبھی غلط نہیں ہوتی ،یہاں 70 سالوں سے ایک کام ہوتا رہا کہ عوامی رائے غلط ہوتی ہے۔اسی سال انتخابات ہو رہے ہیں اور ماضی کے فرسودہ اصول پر کام شروع کردیا گیا ہے کہ انجینئرنگ کے ذریعے لاڈلے کا راستہ ہموار کر دو۔ عوامی رابطے سے پتہ لگ رہا ہے کہ مسلم لیگ ن کو واضح برتری حاصل ہے، ووٹ بینک بھی دوسری پارٹیوں سے زیادہ ہے۔ واضح دو ٹوک اور غیر مبہم الفاظ میں کہنا چاہتا ہوں کہ ملک کی تقدیر شفاف انتخابات سے جڑی ہے ہر جماعت کو ان انتخابات میں حصہ لینے کیلئے یکساں مواقع فراہم ہونے چاہئیں۔ خفیہ راستوں اور ٹیلی فون کالوں سے کسی کے ہاتھ نہ باندھے جائیں اور لاڈلے کیلئے نئی ڈیلیں نہ بنائی جائیں ،جو صرف جھوٹ بہتان اور دھرنوں کی سیاست کرتے ہیں جنہیں عوام بار بار مسترد کر چکے ہیں انہیں تھپکی دے کر آگے نہ لا یا جائے۔پاکستانی عوام کو فیصلہ کرنے دیں۔اگر پردے کے پیچھے کارروائیاں نہ رکیں تو یہیں اسلام آباد میں سارے ثبوت اور شواہد رکھ دوں گا اور بتاؤں گا کہ یہاں کیا کچھ ہوتا رہا ہے۔ میں بتاؤں گا کہ اب کیا کچھ ہو رہا ہے اور کس طرح انتخابی عمل پر اپنی مرضی مسلط کرنے کی کوشش کی جا ری ہے۔ عوامی رائے سے کھیلنے کے نتائج ہم بھگت چکے ہیں، اب جمہوریت کو سچی اور کھری جمہوریت رہنے دیا جائے، اسے اپنی خواہشوں کا غلام نہ بنائیں کیونکہ غلام جمہوریت آمریت کی شکل ہوتی ہے۔
دوستوں سے شئیر کریں

Comments

comments

مزید پڑھیں  ن لیگ کے لیے بُری خبر، 55 اراکین اسمبلی پارٹی چھوڑ جائیں گے