Cofee peene ka nuqsan

صبح سویرے نہار منہ بیڈ ٹی کے عادی حضرات کے ساتھ تو جو ہوتا ہے سو ہوتا ہے لیکن جو لوگ خالی پیٹ کافی پیتے ہیں ان کے لئے تو یہ زیادہ خطرناک بات ہے۔اس رجحان کو جرمنی میں ختم کرنے کے لئے عدالت کو خصوصی آرڈر کرنے پڑ چکے ہیں اور جرمنی میں کافی اور بریڈ کو صحت افزا ناشتہ قرار نہیں دیا جاتا ۔
جو لوگ صبح سویرے خود کو چست کرنے کے خیال سے کافی پینے کی عادت اپناتے ہیں انہیں یہ جان لینا چاہئے کہ خالی پیٹ کافی پینے سے جسم کا میٹابولزم سست ہونا شروع ہوجاتا ہے۔کافی میں موجود کیفین نظام ہضم کو بری طرح متاثر کرتی اور تیزابیت پیدا ہوتی ہے کیونکہ اس سے معدہ میں ایک کیمیکل ہائیڈروکلورک ایسڈ کی مقدار میں اضافہ ہوتا ہے ،ناشتہ کی ضرورت ختم ہوجاتی ہے۔طب کا اصول جسے اب جدید میڈیکل سائنس نے تسلیم کیا ہے کہ صبح اٹھتے ہی پانی پینا زیادہ سود مند ہے ،اگر نیم گرم پانی نوش کیا جائے تو چستی کے ساتھ معدہ سے فضلات کے اخراج میں مدد ملتی ہے ،گردوں کی صفائی ہوجاتی ہے۔جنہیں قبض ہوتی ہے ،وہ کھل جاتی ہے۔بھوک اور ناشتہ کی اشتہا بڑھتی ہے ،جبکہ کافی اسکے برعکس کام کرتی ہے۔

کافی اتنی بھی نقصان دہ نہیں البتہ اسکے استعمال کا درست وقت وہ ہے جب آپ ناشتہ کرچکے ہوتے اور دن کے کافی امور نپٹا چکے ہوتے یا نپٹا رہے ہوتے ہیں ، صبح دس بجے دوپہر یا سہ پہرکو بھی کافی پینا مناسب ہے تاہم یہ کوالٹی والی کافی ہونی چاہئے کیونکہ بازار میں اب غیر معیاری کافی بھی ملتی ہے۔ رات گئے کافی پینے کا مطلب رات بھر جاگنا ہوتا ہے ،جو لوگ راتوں کو کافی پیتے ہیں ان کا فطری طرز زندگی بدل جاتا ہے،نیند ان کا سب سے بڑا مسئلہ بن جاتی اور صبح ناشتہ بھی وقت پر نہیں کرسکتے ۔

دوستوں سے شئیر کریں

Comments

comments

مزید پڑھیں  ہمارے پاس ثبوت موجود ہیں اور 2016کی ناکام فوجی بغاوت کے پیچھے دراصل۔۔ترکی نے دبنگ اعلان کر دیا، کھل کر ایسی بات کہہ دی کہ جس کی بہت سے ممالک کو جرأت نہیں ہو تی